شرعی سوالات

کیا نمازکے اندر یاد آنے پر اعتکاف کی نیت کر سکتے ہیں؟

کیا فرماتے ہیں علماےدین و مفتیان شرع متین اس بارے میں کہ کیا نمازکے اندر یاد آنے پر اعتکاف کی نیت کر سکتے ہیں؟

بسم اﷲ الرحمٰن الرحیم
الجواب بعون الوہاب اللہم ہدایۃالحق والصواب

 نماز میں اعتکاف کی نیت کرنا درست ہے البتہ زبان سے تلفظ کی صورت میں نماز فاسد ہو جائے گی۔

اشباہ والنظائرمیں ہے: ھل تصح نیۃ عبادۃ ،وھو فی عبادۃ اخری ،قال فی القنیۃ :نوی فی صلاۃ المکتوبۃ، او نافلۃ الصوم ،تصح نیتہ،ولا تفسد صلاتہ’

ترجمہ:کیا ایک عبادت میں ہو نے کی حالت میں دوسری عبادت کی نیت صحیح ہے؟ (جواب)قنیہ میں ہے :فرض یا نفل نماز میں روزے کی نیت کی تو اس کی نیت درست ہے اور نماز فاسد نہیں ہو گی۔

          (الاشباہ والنظائرمع غمز عیون البصائر ، جلد 1،صفحہ153،نشات العربی ،بیروت)

غمز عیون البصائر میں ہے:”ھذا اذا نوی بالقلب ،اما لو تلفظ باللسان فسدت”

ترجمہ: یہ(نماز فاسد نہ ہونا) اس وقت ہے جب دل میں نیت کی ہو اور اگر زبان سے تلفظ کیا تو نماز فاسد ہو جائے گی۔

(الاشباہ والنظائرمع غمز عیون البصائر ، جلد 1،صفحہ153،نشات العربی ،بیروت)

                 واللہ اعلم ورسولہ عزوجل و صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم

متعلقہ مضامین

Leave a Reply

Back to top button