ARTICLES

کیا صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے جعرانہ سے عمرہ کا احرام باندھا ہے ؟

استفتاء : ۔ کیا فرماتے ہیں علماء دین و مفتیان شرع متین اِس مسئلہ میں کہ جعرانہ سے نبی انے عمرہ کا احرام باندھ کر عمرہ ادا فرمایا ہے ، کیا آپ اکے سوا صحابہ کرام نے بھی وہاں سے احرام باندھ کر عمرہ ادا کیا ہے ؟

(السائل : رضوان ہارون، مکہ مکرمہ)

جواب

باسمہ تعالیٰ وتقدس الجواب : جعرانہ سے نبی اکا عمرہ کا احرام باندھنا جس طرح احادیث مبارکہ سے ثابت ہے اسی طرح صحابہ کرام علیہم الرضوان کا وہاں سے احرام باندھ کر عمرہ ادا کرنا بھی ثابت ہے ، چنانچہ حدیث شریف ہے : عن ابن عباس رضی اللہ عنہما : أَنَّ رسول اللّٰہ ﷺ وَ أَصْحَابَہُ اعْتَمَرُوْا مِنَ الْجِعِرَّانَۃِ، فَرَمَلُوْا بِالْبَیْتِ، وَ جَعَلُوْا أَرْدِیَتَہُمْ تَحْتَ آبَاطِہِمْ، قَدْ قَذَفُوْہَا عَلٰی عَوَاتِقِہِمْ الْیُسْریٰ (37)یعنی، حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ رسول اللہ ا اور آپ کے صحابہ رضی اللہ عنہم نے جعرانہ سے عمرہ کااحرام باندھااور (بیت اللہ کے طواف کے دُوران ) رمل کیا اور انہوں نے اپنی چادروں کو اپنی بغلوں کے نیچے کیا اور انہیں اپنے بائیں کندھوں پر ڈالا۔ اِس حدیث کو امام احمد بن حنبل متوفی 241ھ نے ’’ المسند‘‘(1/306) میں ، اور امام ابو بکر احمد بن حسین بیہقی متوفی 458 ھ نے ’’السنن الکبریٰ‘‘(38) میں بھی روایت کیا ہے ۔

واللّٰہ تعالی أعلم بالصواب

یوم الخمیس، 15ذوالحجۃ 1427ھ، 4ینایر 2007 م (356-F)

حوالہ جات

37۔ سُنَن أبی داؤد،کتاب المناسک، باب الإضطباع إلخ،الحدیث : 1884، 2/305

38۔ السنن الکبریٰ،کتاب الحج، باب الإضطباع للطواف، الحدیث : 9256،5/129

متعلقہ مضامین

Leave a Reply

Back to top button