بر والدین

والدین کو تکلیف دینا جائز نہیں اور اس کا ازالہ بھی ضروری ہے

عربی حدیث:

حدثنا أبو نعیم، قال: حدثنا سفیان، عن عطاء بن السائب، عن أبیہ، عن عبد اللہ بن عمرو؛ قال: جاء رجل إلى النبی صلى اللہ علیہ وسلم یبایعہ على الہجرۃ، وترک أبویہ یبکیان، قال: ارجع إلیہما، فأضحکہماکما أبکیتہما.۔

اردو ترجمہ:

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس ایک صحابی اپنے والدین کو روتا چھوڑ کر کر ہجرت پر بیعت لینے آئے۔

آپ صلی اللہ علیہ وآلہ و سلم نے انہیں ارشاد فرمایا:

 ”ان کے پاس جاؤ ،جس طرح انہیں رلایا ہے اب انہیں اسی طرح ہنساؤ۔“

تخریج الحدیث:

البخاری( ۵۹۷۶)،

الادب المفرد(۱۳)۔

کتاب: والدین سے حسن سلوک

 عربی کتاب: بر الوالدین، مؤلف: امام محمد بن اسماعیل بخاری رحمہ اللہ

ماخوذ از:
کتاب: بر الوالدین، مؤلف: امام محمد بن اسماعیل بخاری رحمہ اللہ
حوالہ جات:
کتاب: والدین سے حسن سلوک

متعلقہ مضامین

Leave a Reply

یہ بھی پڑھیں:
Close
Back to top button