شرعی سوالات

مضاربت میں فیصدی اعتبار سے ہی نفع تقسیم کرنا

 کیا فرماتے ہیں علماےدین و مفتیان شرع متین اس بارےمیں کہ مضاربت یوں کی کہ ایک کا صرف پیسہ ہو اور دوسرے کا صرف کام۔نفع49فی صد انویسٹر کا اور 51فی صد کام کرنے والے کا ۔کیا یہ مضاربت درست ہے؟

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
الجواب بعون الوہاب اللہم ہدایۃالحق والصواب

یہ مضاربت جائز ہے کیونکہ مضاربت میں فیصدی اعتبار سے ہی نفع تقسیم کرنا ہوتا ہے۔

الدر المختار میں ہے”کون الربح بینہما شائعا وکون نصیب کل منہما معلوما عند العقد”

ترجمہ:(مضاربت درست ہونے کی شرط یہ ہے کہ)دونوں کے درمیان نفع شائع ہو اور عقد کے وقت دونو ں کا حصہ معلوم ہو۔

                                                    (الدر المختارمع رد المحتار،جلد8،صفحہ501،مکتبہ رحمانیہ،لاہور)

                            واللہ اعلم ورسولہ عزوجل و صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم

متعلقہ مضامین

Leave a Reply

Back to top button