مضامین

صحیح بخاری اور ضعیف احادیث

کیا صحیح بخاری میں ضعیف احادیث موجود ہیں؟

سوال: کیا صحیح بخاری میں ضعیف احادیث موجود ہیں؟

جواب: جی ہاں! صحیح بخاری میں بھی ضعیف احادیث موجود ہیں بلکہ امام دار قطنی رحمہ اللہ  نے تو صحیح بخاری کی کئی سو احادیث کو ضعیف قرار دیا ہے لیکن اس سے صحیح بخاری کی جلالت شان میں کوئی فرق نہیں پڑتا کیونکہ ضعیف احادیث  موضوع (من گھڑت اور جھوٹی) نہیں ہوتیں اور علم اصول حدیث میں  ضعیف احادیث کی اپنی ایک مستقل حیثیت ہے۔

مثال کے طور پر امام بخاری رحمہ اللہ نے صحیح بخاری میں یہ حدیث مبارک نقل فرمائی: ” حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ جَعْفَرٍ، حَدَّثَنَا مَعْنُ بْنُ عِيسَى، حَدَّثَنَا أُبَيُّ بْنُ عَبَّاسِ بْنِ سَهْلٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ جَدِّهِ، قَالَ: كَانَ لِلنَّبِيِّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي حَائِطِنَا فَرَسٌ يُقَالُ لَهُ اللُّحَيْفُ “

اس کے راوی  ” أُبَيُّ بْنُ عَبَّاسِ بْنِ سَهْلٍ “ کی کثیر محدثین نے تضعیف فرمائی ہے۔  خود فتح الباری میں ابن حجر عسقلانی رحمہ اللہ فرماتے ہیں: ” أبي بن عباس بن سهل بن سعد الساعدي الأنصاري المدني ضعفه أحمد وابن معين وقال النسائي ليس بالقوي۔ قلت:  له عند البخاري حديث واحد في  ذكر خيل النبي صلى الله عليه وسلم“

دیگر محدثین کی آرا:

  • قال النسائي: ليس بالقوي. (الضعفاء والمتروكون) 23.
  • وقال العقيلي: له أحاديث لا يُتابع منها على شيء. (الضعفاء)
  • وقال الدارقطني: ضعيف. (التتبع) 257.
  • وقال أبو بشر الدولابى : ليس بالقوى .
  • و قال أحمد بن حنبل : منكر الحديث . (تهذيب الكمال، 2/ (277))
  • و قال يحيى بن معين : ضعيف .
  • و في «سؤالات الحاكم» له: تكلموا فيه.
  • وقال الساجي: ضعيف.
  • وقال البخاري فيما حكاه عنه الدولابي: ليس بالقوي. وذكره أبو العرب في «جملة الضعفاء»

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button