شرعی سوالات

راہن کی اجازت سےاگر مرہون چیز کرایہ پر دی تو کرایہ کا مالک راہن ہے اور بلااجازت دی تو رقم صدقہ کردے

سوال :

ایک مومن نے حربی ، مشرک کا مکان 300 روپے میں رہن لیا ہے۔ اس مکان کا کرایہ مومن کے لیے جائز ہے یا نہیں ؟ اگر جائز ہے تو کس طرح؟ نہیں تو کرایہ کی رقم کہاں صرف کی جا سکتی ہے، خود صرف میں لے آئے تو کیا کرے؟مومن کا مکان مومن نے رہن رکھا، اب اس مکان کا کرایہ کون لے گا؟ اگر زبانی کچھ کرایہ مالک کو دینا طے کیا تو باقی کرایہ خود کام میں لا سکتا ہے؟

جواب:

            اگر مکان مرہون مرتہن نے راہن کی اجازت سے کرایہ پر دیا ہے تو کرایہ کا مالک راہن ہے ۔ مرتہن کو اس کرایہ کا لینا جائز نہیں۔ اگر مرتہن نے بلا اجازت راہن اس مکان کو کرایہ پر دیا ہے تو کرایہ مرتہن لے لیکن وہ صدقہ کر دے، اپنے صرف میں نہ لائے ۔

(فتاوی اجملیہ، جلد3، صفحہ 278،شبیر برادرز، لاہور)

متعلقہ مضامین

Leave a Reply

Back to top button