تتلی کی تصویر  والے کپڑے میں نماز ہو جائے گی یا نہیں

تتلی کی تصویر  والے کپڑے میں نماز ہو جائے گی یا نہیں

 کیا اس تتلی کی تصویر  والے کپڑے میں نماز ہو جائے گی یا نہیں ؟  کپڑے پر تتلیاں بنی ہوں تو نماز کا حکم کیا ہے؟

جواب:

 آپ کی بھیجی ہوئی تتلی کی تصویر  والے کپڑے میں جو پھول نما تتلیاں پرنٹ ہیں . وہ بہت ہی چھوٹی چھوٹی ہیں . اتنا واضح نہیں کہ اگر اس کو زمین پر رکھ کر کھڑا ہوکر دیکھا جائے تو اعضا کی تفصیل ظاہر ہوں. لہٰذا اس قدر معاف ہے. اس تتلی کی تصویر  والے کپڑے میں نماز میں کسی قسم کی کراہت نہیں.

تتلی کی تصویر  والے کپڑے میں نماز ہو جانے کے متعلق اصول:

محض کپڑے پر جاندار کی تصویر کا ہونا ہونا کافی نہیں. بلکہ کراہت کے لیے تصویر کا اتنا بڑا ہونا ضروری ہے کہ اس کے ظاہری بدن کی تفصیلا شناخت ہوسکے.

اعلی حضرت امام احمد رضا محقق بریلوی علیہ الرحمہ لکھتے ہیں:
کسی جاندار کی تصویر جس میں اس کاچہرہ موجود ہو اور اتنی بڑی ہو کہ زمین پر رکھ کرکھڑے سے دیکھیں تو اعضا کی تفصیل ظاہرہو، اس طرح کی تصویر جس کپڑے پر ہو اس کا پہننا، پہنانا یابیچنا، خیرات کرنا سب ناجائز ہے، اور اسے پہن کرنماز مکروہ تحریمی ہے جس کا دوبارہ پڑھنا واجب ہے۔

(فتاویٰ رضویہ 556/24)

آپ کی بھیجی ہوئی تتلی کی تصویر  والے کپڑے میں  تتلیاں اتنی بڑی نہیں. لہٰذانماز میں  کراہت بھی نہیں ہو گی.

تتلی کی تصویر  والے کپڑے میں نماز ہو جائے گی یا نہیں

kia is titlee ki tasweer walay kapray mein namaz ho jaye gi ya nahi?  Kapre par titliyan bani hon to namaz ka hukum kya hai ?

jawab :
Ap ki bhaije hui titlee ki tasweer walay kapray mein jo phool numa titliyan print hain. woh bohat hi choti choti hain. itna wazeh nahi ke agar is ko zameen par rakh kar khara hokar dekha jaye to aaza ki tafseel zahir hon. lehaza is qader maaf hai. is titlee ki tasweer walay kapray mein namaz mein kisi qisam ki karahat nahi .

mehez kapray par jandaar ki tasweer ka hona hona kaafi nahi. balkay karahat ke liye tasweer ka itna bara hona zaroori hai ke is ke zahiri badan ki tfsila shanakht hosakay .

aala hazrat imam Ahmed Raza muhaqiq briloy alaihi alrhmh likhte hain :
kisi jandaar ki tasweer jis mein is kach_hrh mojood ho aur itni barri ho ke zameen par rakh krkhrhe se dekhen to aaza ki tafseel zahir ho, is terhan ki tasweer jis kapray par ho is ka pehnana, khairaat karna sab najaaiz hai, aur usay pehan kr numaz makrooh tahrimi hai jis ka dobarah parhna wajib hai .
( Fatawa rizviya 556 / 24 )

Ap ki bhaije hui titlee ki tasweer walay kapray me  titliyan itni barri nahi.

Leave a Reply

Right Menu Icon